اکثر عورتیں شادی کے بعد اپنے شوہر کے ساتھ سونے سے کیوں انکار کر دیتی ہیں

اکثر شادی شدہ مردوں کی زبان پر ایک ہی بات ہوتی ہے کہ بیوی ہم بستری کے لیے ہمیشہ ہے تیار ہوتی ہے لیکن یہ غلط ہے۔ اور اگر مرد ہم بستری کرتا ہے تو ایک دفعہ کر کے بیوی منع کر دیتی ہے تو دوستو سوچنے والی بات یہ ہے کہ ایک بیوی اپنے خاوند کو ہمبستری کرنے سے بہت خوش ہوتی ہیں لیکن بعض عورتیں اپنے خاوند کو منع کرتی رہتی ہیں کہ آج میرا موڈ نہیں ہے اور طرح طرح کے بہانے بنانے لگ جاتی ہیں۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ اکثر مرد بیوی کو گرم کرنے سے پہلے ہی ڈنڈا بیوی کی شرمگاہ میں ڈال دیتا ہے جس سے عورت کو بے حد تکلیف ہوتی ہے۔ عورت کو مزے کی بجائے درد ہوتا ہے اور اس کی چیخیں نکل جاتی ہیں۔مرد کو اس بات کا احساس تک نہیں ہوتا لیکن کئی دفعہ اسی وجہ سے عورت انکار کر دیتی ہے۔

اگر کوئی مرد عورت کی جنسی خواہش کا خیال نہیں رکھے گا تو پھر وو دونوں مل کر ایک ساتھ زندگی کیسے گزر سکتے ہیں کیوں کہ اس سے عورت مرد کی اس حرکت سے خوش نہیں ہوتی جس سے دونوں میں دوریاں پیدا ہو جاتی ہیں .کیوں کہ اگر مرد عورت کی جنسی عمل کا خیال نہیں رکھے گا تو فر وہ خوش حال زندگی نہیں گزار سکتے اور بعد میں یہ نوبت طلاق تک پونچ جاتی ہے .

عورت سے ہمبستری کرنے سے پہلے یہ لازم ہے کہ عورت کو گرما کیا جائے تاکہ عورت کی شرمگاہ گیلی ہو جائے اور دخول باآسانی ہو جائے اور تکلیف کے بجائے مزا آئے۔ اس مقصد کے لیے آپ کو عورت کی رانوں پر ہاتھ پھیرنے چاہیں نازک جگہیں جیسے کہ ممے اور ہونٹ ہیں ان کو چومنا چاہیے۔ ان جگہوں سے چومنے سے عورت میں جوش پیدا ہوتا ہے۔ آہستہ آہستہ ہاتھ کو عورت کی شرمگاہ تک بھی لے جائیں اور پھر عورت جلدی سے گرم ہو کر گیلی ہو جاتی ہے اور یہ ہی سب سے اچھا وقت ہوتا ہے ڈنڈا اندر ڈالنے کا۔ آپ اندر ڈالیں اور زور سے جھٹکے ماریں۔ اگر آپ فارغ ہونے کے قریب آئیں تو جلدی سے نفس باہر نکال لیں اور ایک منٹ تک اندر نہ ڈالیں ایسا کرنے سے ڈنڈا نرم ہو جاتا ہے اور آپ کا ٹائم بڑھ جاتا ہے۔ ایسے روز کرنے سے آپ کے نفس کی ورزش ہوتی ہے اور قدرتی طور پر آپ کی ٹائمنگ بڑھ جاتی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں