نماز پڑھنے سے جسم کے اس حصے پر کیا اثرات پڑ تے ہیں، نماز کا ایسا فائدہ بتا دیا کہ غیر مسلم بھی ایمان لانے پر مجبور ہوجائیں گے

نیویارک(نیوز ڈیسک)اہل مغرب اسلام کے خلاف جتنا بھی بغض رکھتے ہوں لیکن یہ تو سچ ہے کہ سورج جب آپ کی آنکھوں کے سامنے پوری آب و تاب سے دمک رہا ہو تو اس کی روشن کرنوں کا انکار کرنا ممکن نہیں ہوتا۔

اسلام کے سنہری اصولوں کے سامنے جدید سائنس کے سر تسلیم خم کرنے کی تازہ ترین مثال امریکا میں سامنے آئی ہے، جہاں سائنسدانوں نے ایک جامع تحقیق کے بعد اعتراف کر لیا ہے کہ باقاعدگی سے نماز ادا کرنے والے کمر، جوڑوں کے درد اور دیگر کئی مسائل سے محفوظ رہتے ہیں۔۔

دی انڈی پینڈنٹ کے مطابق سائنسی جریدے ’انٹرنیشنل جرنل آف انڈسٹرئیل اینڈ سسٹمز انجینئرنگ‘ میں ایک تازہ ترین تحقیق ’’ این ایرگو نومک سٹڈی آف باڈی موشن ڈیورنگ مسلم پرئیر یوزنگ ڈیجیٹل ہیومن ماڈلنگ (An Ergonomic Study of Body Motion During Muslim Prayer Using Digital Human Modeling) ‘‘ کے نام سے شائع کی گئی ہے ۔

اس تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ باقاعدگی سے نماز پڑھنے سے کمر کے درد سے نجات مل جاتی ہے ، جوڑوں کا درد ختم ہو جاتا ہے، جوڑوں کی لچک میں اضافہ ہو جاتا ہے ، اور جسم کی عمومی توانائی ، طاقت اور صحت میں بھی اضافہ ہو جاتا ہے۔

اس تحقیق کیلئے کمپیوٹر ماڈلنگ کی جدید ترین ٹیکنالوجی استعمال کی گئی جس کے ذریعے بھارتی ، ایشیائی اور امریکی مردو خواتین کی بڑی تعداد کی جسمانی حرکات کو نماز کی ادائیگی کے دوران مانیٹر کیا گیا۔

یہ تحقیق امریکی ریاست پنسلوانیا کی پین سٹیٹ بیرینڈ یونیورسٹی کے سائنسدانوں نے کی، جن کا کہنا ہے کہ نتائج سے یہ بات واضح ہو گئی ہے کہ باقاعدگی سے نماز پڑھنا کمر، جوڑوں کے درد سے نجات دیتا ہے، بلکہ یہ پیچیدہ اعصابی بیماریوں کے لئے بھی شاندار علاج ہے۔

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ
آج کی سب سے زیادہ پڑھی جانے والی تحریر

موسیٰ علیہ السلام نے اپنے پروردگار سے سرگوشی کرتے ہوئے پوچھا

موسیٰ علیہ السلام نے اپنے پروردگار سے سرگوشی کرتے ہوئے پوچھا :
” اے پروردگار ! تیرا چہرا کس طرف ہے ؟
شمال یا جنوب کی جانب ؟
تاکہ میں اس کی طرف منہ کر کے تیری عبادت کر سکوں ۔
”.اللہ تعالیٰ نے موسیٰ علیہ السلام کی طرف وحی بھیجی :
“اے موسیٰ ! آپ آ گ جلائیں ، پھر اس کے اردگرد چکر لگا کر دیکھیں کہ آگ کا رخ کس جانب ہے ؟”.
موسیٰ علیہ السلام نے آ گ روشن کی اور اس کے اردگرد چکر لگایا ،
دیکھا تو آ گ کی روشنی ہر چار سو یکساں ہے ۔
چنانچہ دربارِ الٰہی میں عرض کیا :
”پروردگا ! میں نے آگ کا رخ ہر جانب یکساں ہی دیکھا ۔”
اللہ تعالیٰ نے فرمایا: “اے موسیٰ میری مثال بھی ویسی ہی ہے۔”
موسیٰ علیہ السلام نے پوچھا :” اے پرودگار! تو سوتا ہے یا نہیں ؟
”اللہ تعالیٰ نے ان کی طرف وحی نازل فرمائی :
” اے موسیٰ ! پانی سے بھرا ہوا ایک پیالہ اپنے دونوں ہاتھوں پر رکھ لو ،
پھر میرے سامنے کھڑے رہو اور نیند کی آغوش میں مت جاؤ ۔
موسیٰ علیہ السلام نے ایسا ہی کیا ۔
پھر اللہ تعالٰی نے ان پر ہلکی سی اونگھ ڈالی ،
پیالہ ان کے ہاتھ سے گر کر ٹوٹ گیا اور پانی بہہ گیا ۔
موسیٰ علیہ السلام کی چیخ نکل گئی اور وہ گھبرا گئے .
پھر اللہ تعالیٰ نے فرمایا :” اے موسی ! میں آنکھ کی ایک جھپک بھی سو جاؤں تو یہ آسمان زمین پر دھڑام سے گر پڑے گا جیسے تیرا پیالہ زمین پر گر پڑا ۔”
اور یہ اللہ تعالیٰ کے اس قول کی طرف اِشارہ ہے ۔۔
” یقینی بات ہے کہ اللہ تعالیٰ اسمانون اور زمین کو تھامے ہوئے ہے کہ وہ ٹل نہ جائے تو پھر اللہ کے سوا اور کوئی ان کو تھام بھی نہیں سکتا ،
وہ حلیم و غفور ہے ۔ (فاطر ۔ 41) ۔
موسیٰ علیہ السلام نے پوچھا : اے میرے پروردگار ! تو نے مخلوق کی تخلیق کیوں کی جبکہ ان سے تجھے کوئی ضرورت نہیں پڑتی ؟ال
لہ تعالیٰ نے فرمایا :” میں نے ان کی تخلیق اس لیے فرمائی ہے تاکہ یہ مجھے پہچانیں ،
مجھ سے اپنی مرادیں مانگیں اور میں ان کی مرادیں پوری کروں ،
اور میری نافرمانی کے بعد مغفرت و بخشش کی درخواست لے کر میری خدمت میں حاضر ہوں اور میں ان کے لیے مغفرت و بخشش کا پروانہ جاری کروں ۔
”موسیٰ علیہ السلام نے پوچھا میرے رب ! کیا تو نے کوئی ایسی چیز بھی پیدا کی ہے جو تیری ہی جستجو میں رہتی ہے ؟ال
لہ تعالیٰ نے فرمایا :” ہاں مومن بندے کا دل جو میرے لیے خالص ہے ۔”
موسیٰ علیہ السلام نے پوچھا : یہ کیسے اے پروردگار ؟
اللہ تعالیٰ نے موسی علیہ السلام سے فرمایا :”جب مومن بندہ مجھے نہیں بھولتا تو اس کا دل میری یاد سے لبریز رہتا ہے اور میری عظمت اس پر محیط ہوتی ہے اور مجھے جو یاد کرتا ہے میں اس کا ساتھی بن جاتا ہوں …”

اپنا تبصرہ بھیجیں