مریم نواز نے اپنی یہ تصویر سوشل میڈیا پر لگائی تو مخالفین نے آگے سے کیا انتہائی شرمناک کام کر دیا ؟جان کر آپ کے بھی گال لال ہو جائیں گے

سوشل میڈیا صارفین کوئی بھی موقع ہاتھ سے نہیں جانے دیتے چاہے وہ صدر پاکستان ہو یا پھر وزیراعظم ،اگر کوئی بات پکڑی گئی تو ایسے ایسے تبصرے پڑھنے کو ملتے ہیں جو کہ اخلاقیات سے کئی درجے گرے ہوئے ہوتے ہیں اور ایسا ہی کچھ مریم نواز کے ساتھ بھی کیا گیا ،مریم نواز کی جب پیلے رنگ کے سوٹ میں تصاویر سوشل میڈیا پر آئیں تو ہنگامہ برپا ہو گیا اورسوشل میڈیاپر ان کے مخالفین نے انہیں ’ٹیکسی ‘کہہ کر مخاطب کرنا شروع کر دیا

جو کہ ایک انتہائی شرمناک بات ہے۔تفصیلات کے مطابق پاکستانی سیاست میں گالیوں کا عنصر تو پہلے ہی بہت پروان چڑھ چکاہے جس کا نظارہ ن لیگ اور تحریک انصاف کے رہنماﺅں کے درمیان ایک دوسرے پر جملے کستے ہوئے کیا جا سکتاہے ،اس کی سب سے بڑی مثال حال ہی میں فواد چوہدری کی جانب سے جاری کردہ بیان بھی ہے

جس میں انہوں نے ن لیگ کی سیاست کو ’ہیرا منڈی ‘سے تشبیہ دی تاہم یہ کوئی پہلی مرتبہ نہیں بلکہ دونوں پارٹیوں کی جانب سے ایک دوسرے کی نجی زندگی پر بھی خوب تبصرے کیے جاتے ہیں ۔اپنے لیڈرز اور رہنماﺅں کو دیکھ کر کارکنان بھی کیا سیاسی تربیت حاصل کریں گے ؟وہ بھی ان کے نقش قدم پر چلتے ہوئے مستقبل میں سیاست کا حصہ بنیں گے ۔

سابق وزیراعظم نوازشریف کی صاحبزادی مریم نواز نے پیلے رنگ کے کپڑوں میں تصویر سوشل میڈیا پر شیئر کی تو طوفان بدتمیزی سا برپا ہو گیا تاہم دوسری جانب اگر یہ کہا جائے کہ وہ بہت خوبصورت لگ رہی ہیں تو غلط نہ ہو گا ۔سوشل میڈیا صارف نے سابق وزیراعظم نوازشریف پر الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے بھی مبینہ طور پر ایک مرتبہ محترمہ بینظیر بھٹو شہید کو ’پیلی ٹیکسی ‘ کہہ کر پکارا تھا

تاہم ’زیب عالم ‘نامی صارف فوری میدان میں آئے اور انہوں نے ’جے بی ‘ نامی صارف کی درستگی کرتے ہوئے بتایا کہ نوازشریف نے نہیں بلکہ شیخ رشید نے یہ الفاظ ادا کیے تھے اور اس وقت شیخ رشید مسلم لیگ ن کے رہنما تھے ۔

ماہ ذی الحجہ اسلام کا اہم ترین مہینہ ہے جسمیں مسلمان وحدت ،یکجہتی،یگانگت کا عملی مظاہرہ حج کی صورت میں کرتے ہیں،ساری دنیا کے مسلمان ایک لباس ،ایک نعرۂ مستانہ لبیک اللھم لبیک بلند کرتے ہوئے کرہ ارض کے سب انسانوں کو پیغام دیتے ہیں کہ ہماری زبانیں، رنگ ،قومیں جدا جدا ہونے کے باوجود ہم ایک اﷲ ،ایک قرآن ،ایک نبی (حضرت محمد ﷺ) ایک اسلام کو ماننے والے یک جان ویک قالب ہیں ۔اﷲ کے رسول ﷺ کے فرمان کامفہوم ہے کہ جس شخص نے اﷲ کو راضی کرنے کیلئے بیت اﷲ کا حج کیا اسمیں گناہوں سے بچا رہاتو اس کے گناہ اس طرح معاف کردئیے جاتے ہیں جیسے ایک بچہ اپنی ماں کے پیٹ سے گناہوں سے پاک پیدا ہوتا ہے۔حج کے عمل میں ایک رکن قربانی بھی ہے ہر حاجی جانور کی قربانی کرتا ہے ۔قربانی کا عمل حج تک محدود نہیں ہے بلکہ جس شخص پرقربانیلازم ہو جائے تووہ اسے ہر حال میں ادا کرے، اگر ایک شخص پر قربانی لازم ہوگئی اس نے قربانی نہ کی تو گناہ گار ہوگا ۔آج کے پرفتن دور میں کچھ پڑھے لکھے جاہل یہ بات عام کرتے دکھائی دیتے ہیں کہ قربانی صرف حج کرنے والوں پر لازم ہوتی ہے دوسرے لوگوں پر نہیں ،ایسے لوگوں کا کہنا ہے کہ اتنے مہنگے جانور خریدنے کا کیا فائدہ یہ رقم غریبوں میں تقسیم کردی جائے تو غربت کا خاتمہ ہوجائے ۔ایسے لوگوں کی خدمت میں احترام کے ساتھ گذارش ہے کہ قربانی جس شخص پر لازم ہے اگر وہ قربانی نہیں کرے گا تو قابل گرفت ہوگا۔دور نبویﷺ میں صحابہ کرامؓجانوروں کو خرید کر سارا سال پال کر موٹا تازہ کرتے اورذی الحجہ کے مہینہ، عید الضحیٰ کے موقعہ پر قربانی کی جاتی تھی ۔قربانی کے عمل کوصرف حج کے ساتھ ہی منسلک کرکے عام لوگوں کو اس سے بری الذمہ قراردینا سراسر جہالت ہے ۔مسلمان ایسے پڑھے لکھے جاہلوں کے چکرمیں نہ آئیں کیونکہ عیدالضحیٰ کا سب سے اہم عمل قربانی ہے جسے صاحب استطاعت لوگوں پر لازم قراردیا گیا ہے ۔

قربانی کے موقعہ پر مسلمانوں کو چاہیے کہ وہ اﷲ کے اس فرمان کے مفہوم کو اپنے ذہن میں رکھیں کہ تمہارے جانور کا خون،گوشت اﷲ کے پاس نہیں پہنچتا اگر تمہارا کچھ اﷲ کو پہنچتا ہے تو وہ تمہارا تقویٰ ہے ۔یعنی قربانی کرتے وقت یہ ذہن میں پورے اخلاص کے ساتھ رہے کہ یہ قربانی میں خالص اﷲ ورسول ﷺ کی رضا کیلئے کر رہا ہوں تاکہ میرا خالق اﷲ رب العزت اس حکم کی تعمیل پرمجھ سے راضی ہو جائے ۔اگر دل میں ذرا سا بھی خیال پیدا ہوگیا کہ فلاں شخص کو خوش کرنے یا دکھانے کیلئے یہ عمل کر رہا ہوں تو یہ نیک ترین عمل ضائع ہو جائے گا ،گوشت کے سوا کچھ نہیں ملے گا آج تو جانوروں کے نام اداکاروں کے نام پر رکھے جاتے ہیں جو ناصرف ناجئز بلکہ قربانی کی توہین کے مترادف ہے ۔اسلام کے فلسفہ ٔ قربانی اور سائنس پر غور کیا جائے تو یہ بات سامنے آتی ہے ،انسانی جسم کیلئے سال میں ایک بار گوشت کا استعمال لازم ہوتا ہے ۔اﷲ تعالیٰ نے قربانی کا حکم کرکے ان غریب مسلمانوں کا بھی خوب خیال رکھا جو سارا سال گوشت نہیں کھا سکتے ۔ اسی لئے اسلام نے قربانی کرنے والوں کو حکم دیا ہے کہ قربانی کے گوشت کے تین حصے کئے جائیں ایک اپنے گھر کیلئے ،دوسرا رشتہ داروں کیلئے اور تیسرا غرباء کیلئے ۔ قربانی کا گوشت تقسیم کرتے وقت ہمیں گوشت کے تین حصے کرنے چاہیں تاکہ معاشرے کے تمام طبقات خصوصا ً غرباء تک گوشت کی رسائی ممکن ہو سکے ۔بعض لوگ سارا گوشت اپنے پاس رکھ لیتے ہیں کسی کو نہیں دیتے یہ دلیل پکڑتے ہیں کہ اسلام کا حکم ہے کہ اگر گوشت کم ہے تو اپنے پاس رکھ لیں،کم کی مقدار ایسے لوگوں کے کہاں اپنے ذہن کے مطابق ہوتی ہے ۔حکم تو یہ ہے کہ اگر جانور کا گوشت اتنا کم ہو کہ آپ کے گھرانہ بڑی مشکل سے پورا ہورہا ہے تو جائز ہے لیکن ایسا نہیں ہونا چاہیے کہ فریزرز گوشت سے بھر لیں اور کہیں ہمارے گھر کیلئے یہ ناکافی ہے ۔ ہاں جن کا واقعی گوشت کم ہے وہ سارا گوشت اپنے گھر رکھ سکتے ہیں، اگر کوئی اخلاص کے ساتھ مشاہیر اسلام کی سنت پر عمل کر تے ہوئے اسے بھی غرباء میں تقسیم کردے تو اس کا اجر اﷲ تعالیٰ انھیں بڑھا چڑھا کر اپنی شان کریمی کے مطابق دیں گے ۔

قارئین کرام !فلسفہ ٔ قربانی کا ایک پہلو جہاں غرباء کو خوشیوں میں شامل کرنا ہے وہیں ہی یہ بھی فلسفہ ٔ قربانی میں شامل ہے کہ اپنی محبوب ترین چیزاﷲ کے راستے میں خرچ کردو ۔ایک مرتبہ ایک شخص حضور ﷺ کی خدمت میں حاضر ہو اس نے عرض کیا یارسول اﷲ ﷺ میں ایک غریب آدمی ہوں میرا ہمسایہ جو آپ ﷺ کو ماننے والا ہے (درحقیقت وہ منافق تھا)اس کے گھر میں ایک کھجور کا درخت ہے جس کی کچھ شاخیں میرے گھر میں لٹکی ہوئی ہیں بچے کھجوریں توڑ کر کھاتے ہیں تو وہ برے اخلاق کے ساتھ پیش آتا ہے اسے سمجھائیں ایسا نہ کیا کرے ۔اﷲ کے رسول ﷺ نے اس شخص کو بلایا ، رسول اﷲ ﷺ نے اس منافق سے فرمایاکہ تم اپنے گھر میں لگی کھجور قیمتاً مجھے دے دو تو اس منافق نے کہا کہ یارسول اﷲ ﷺ یہ کھجور کا درخت مجھے اور میرے بچوں کو بڑا محبوب ہے اور اس پر گزر اوقات بھی کرتے ہیں لہٰذا اسے میں آپﷺ کو نہیں دے سکتا ۔جب وہ منافق مجلس سے اٹھ کر گیا تواسی مجلس میں بیٹھاایک صحابی رسول ؓسیدھا اس منافق کے پاس گیا اور کہنے لگا کیا تم کھجور کا درخت فروخت کرو گے؟ تو منافق نے کہا کہ تم اپنا سارا قمیتی ترین باغ مجھے دے دو تب میں ایک کھجور کا درخت تمہیں دوں گا تو وہ صحابی ؓ خوشی سے جھوم گئے اور کہا مجھے یہ منظور ہے ۔صحابی رسولؓ با غ کے دروازہ پر کھڑے ہوکر اپنی بیوی بچوں کو آواز دیتے ہیں کہ میں نے باغ فروخت کردیا باہر آجاؤ اس صحابی ؓ کی بیوی اور بچے باغ سے باہر آئے اور سیدھے گھر چلے گئے ایک کھجور کے بدلے باغ اس منافق کو دے دیا اور سیدھے نبی رحمت ﷺ کی خدمت اقدس میں حاضر ہوئے اور عرض کرتے ہیں کہ یارسول اﷲ ﷺ وہ کھجور کا درخت میں نے خرید لیا ہے اب میں آپ ﷺ کو تحفہ کے طور پر پیش کرتا ہوں ،حضور ﷺ نے استفسار فرمایا تو عرض کیا یارسول اﷲ ﷺ ایک درخت کے بدلے سارا باغ دے دیا کیونکہ آپ ﷺ کی خواہش تھی جسے میں پورا کرنا ضروری سمجھتا تھا تو اﷲ کے رسول ﷺ اس عمل پر بہت خوش ہوئے اور فرمایا تمہارے اس عمل کی وجہ سے اﷲ تعالیٰ تم سے خوش ہوگیا ۔مسلمانوں کو چاہیے کہ عید قربان پر صحابی ؓ کے اس عمل کو ذہن میں رکھ دل کھول کر گوشت غرباء میں تقسیم کریں ۔

قربانی کا ایک فلسفہ یہ بھی ہے کہ انسان خود کو اﷲ تعالیٰ کے سامنے سرنگوں،سرنڈر کردے۔حضرت سیدناابراہیم ؑ اور ان کی فرزند ارجمند حضرت سیدنا اسماعیل ؑ نے جب خود کو اﷲ کے حکم کی تعمیل میں سرنڈر کردیا ،باپ بیٹے کو قربان کرنے اور بیٹا خوشی سے قربان ہونے کو تیار ہوگیا تو قدرت خوشی سے جھوم اٹھی ان نفوس قدسیہ پر فخر کرتے ہوئے ملائکہ،جن وانس سے ہم کلام ہوکر فرمایا کہ اے مخلوقات کل !دیکھو،ذرا غور سے دیکھو میں اﷲ نے حضرت انسان کو اس لئے پیدا کیا تھا کہ خواہشات ہونے کے باوجود وہ خود کو میر سامنے سرنڈر کئے ہوئے ہے۔راقم کے نزدیک قربانی کا سب سے بڑا،اہم ترین فلسفہ یہی ہے کہ انسان اپنے خالق ومالک اﷲ رب العزت کے سامنے ہر لمحہ خود کو سرنگوں رکھے ۔آئیے عید الضحیٰ کے اس اہم ترین پیغام کو اپنے اذہان وقلوب میں جگہ دیں اور عزم صمیم کریں کہ ہم مسلمان اپنی ریاستوں میں قرآن کو آئین قرار دے کر اﷲ کے حکم کو پورا کریں گے اﷲ کی زمین پر اس کا نظام خلافت قائم کریں گے،حکم،قانون صرف اﷲ ہی کا مانیں گے اﷲ کے علاوہ اگر کوئی شخص اﷲ کے مقابلے میں قانون لائے گا ہم اسے کسی صورت نہیں مانیں گے ،ہماری زندگی کی زینے قرآن وسنت کے غلام رہیں گے۔اگر ہم نے عزم پر کاربند رہنے کا اﷲ سے وعدہ کرلیا تو ہماری زندگیوں میں ایک انقلاب پیدا ہوجائے گا جو اس زمین کو جنت کا ٹکڑا بنا کر انسانیت کے جذبات کی ترجمانی کریگ