کرائے کی کوکھ… ایک حل؟

[ad_1]

اسلام آباد(قدرت روزنامہ) سنی لیون کو کون نہیں جانتا. انہوں نے اور ان کے شوہر ڈینیل ویبر نے گزشتہ برس ایک بچی کو گود لیا تھا.

اب ان کے ہاں جڑواں بچوں کی پیدائش ہوئی ہے جس کا اعلان انہوں نے 5 مارچ کو سوشل میڈیا کے ذریعے کیا اور ساتھ ہی بچوں کی تصاویر بھی شیئر کیں. مجھے دیکھ کر بہت اچھا لگا اور خوشی ہوئی کہ دونوں کا پروفیشن جو بھی ہے، جیسا بھی ہے، مگر ایک فطری اور ارتقائی تسلسل کو برقرار رکھنے اور اپنے رشتے کو مضبوط بنانے کےلیے انہوں نے جو بھی کیا وہ خاصی حد تک درست حد تک درست تھا. خاصی حد تک اس لیے کیونکہ ہم نہیں جانتے کہ سنی کو طبی مسائل تھے یا وہ اپنی مصروفیات کی بناء پر اس طریقہ تولید کو اپنانے پر آمادہ ہوئیں. خیر، وجہ جو بھی ہو، میں ڈینیل ویبر کو اس بات کےلیے سراہتی ہوں کہ اگر وہ روایتی پاکستانی مردوں کی طرح ہوتا تو سنی لیون کو نہ جانے کن کن القابات سے نوازتا اور سب کچھ کرلینے کے بعد شاید اسے برا بھلا کہنے میں کوئی کسر اٹھا نہ رکھتا. مجھے سیروگیسی کے بارے میں یہ بھی پتا چلا ہے کہ انڈیا میں غیر شادی شدہ ہونے کے باوجود فلم ساز کرن جوہر نے بھی سروگیسی کے ذریعے 2 جڑواں بچے پیدا کر رکھے ہیں جب کہ ادکار تشار کپور نے بھی شادی سے قبل ہی اسی سہولت کے ذریعے بیٹا پیدا کر رکھا ہے. علاوہ ازیں بولی ووڈ کے بادشاہ، شاہ رخ خان نے بھی اپنے سب سے چھوٹے بیٹے کو سروگیسی کے ذریعے ہی پیدا کیا جب کہ عامر خان بھی اسی سہولت کے ذریعے ایک بیٹے کی پیدائش کرچکے ہیں. اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے

کہ آخر ’’سروگیسی‘‘ ہے کیا؟ تو جناب جب بیوی کسی وجہ سے خود بچے کو جنم نہ دے سکے تو میاں کے نطفے اور بیوی کے بیضے سے لیبارٹری میں جنین (بارور بیضہ) تیار کرکے اسے کسی صحت مند عورت کے رحم میں منتقل کردیا جاتا ہے جہاں یہ قدرتی عمل سے گزر کر ایک بچہ بننے کے بعد مقررہ وقت پر پیدا ہوجاتا ہے. یہی وہ عمل ہے جسے ’’سروگیسی‘‘ (surrogacy) کہا جاتا ہے. اس طرح بچے کو جنم دینے والی خاتون کو ’’سروگیٹ مدر‘‘ (surrogate mother) یا متبادل ماں کہا جاتا ہے. یہ عورت اگرچہ اس بچے کی حقیقی ماں نہیں ہوتی لیکن اس کے رحم میں جنین منتقل کردیا جاتا ہے جسے وہ نو مہینے اپنے رحم میں پالتی ہے اور جنم دیتی ہے. اب پاکستان کی بات کرتے ہیں. پاکستان میں بچہ نہ ہونے پر طلاقیں ہونا ایک عام سی بات ہوکر رہ گئی ہے. شادی شدہ جوڑوں میں طلاق کا راستہ اختیار کرنے کی متعدد وجوہ ہیں. اکثر اوقات اس کی ایک وجہ جوڑوں کا ایک دوسرے کو سمجھنے کی صلاحیت سے عاری ہونا ہے اور بعض اوقات اس کے پیچھے جہیز سے جڑے ہوئے مسائل ہیں، یا دوسری عورت… جبکہ اس کے پیچھے ایک وجہ عورت کا بانجھ ہونا بھی ہے. مرد، عورت کو طلاق دے کر کسی اور عورت کو بیاہ لیتا ہے جو اس کے خیال میں بچہ پیدا کرنے کی صلاحیت کی حامل ہوتی ہے. میں ذاتی طور پر یہ سمجھتی ہوں کہ طلاق دینے کےلیے بچہ پیدا کرنے کی اہل نہ ہونے کی وجہ بتانا بالکل بے بنیاد ہے. اگر کسی وجہ سے جوڑا بچہ پیدا نہیں کرسکا تو بچہ گود لینے میں کوئی حرج نہیں.

بہت سے لوگوں کا یہ خیال ہوتا ہے کہ وہ بچہ ان کا نہیں ہوگا، باپ چاہتا ہے کہ بچہ اس کا اپنا ہو، جس کی رگوں میں اس کا اپنا خون دوڑ رہا ہو. اس خیال نے مجھے بہت پریشان کیا ہوا ہے اور میں نے یہ جاننے کی کوشش کی کہ اس وجہ سے ہونے والی طلاقوں کو روکنے کےلیے کیا کچھ کیا جاسکتا ہے. بہت غور و خوص کے بعد میں ایک غیر روایتی خیال تک پہنچی… ایک ایسا خیال جو ہمارے معاشرے میں سوچنا بھی ممنوع ہے. اور وہ ہے surrogacy یعنی کرائے کی ماں حاصل کرنا. اس عمل میں تولیدی مادہ مصنوعی ذرائع سے کسی دوسری عورت کے رحم میں داخل کرکے، اس کی کوکھ میں اپنا بچہ پالا جاتا ہے اور کوئی دوسری عورت اسے اس عورت کےلیے جنم دیتی ہے جو بچہ پیدا کرنے کی صلاحیت سے قاصر ہے. جب مجھے سروگیسی کی بابت معلوم ہوا تو مجھے محسوس ہوا کہ یہ طریقہ اختیار کرکے کسی عورت کو طلاق سے بچایا جاسکتا ہے. .

..

[ad_2]

Source link

اپنا تبصرہ بھیجیں