مسلم لیگ (ن ) کیلئے سیاہ ترین دن ۔۔ ایک ساتھ 2رکن قومی اسمبلی نے نواز شریف کو الوداع کہہ دیا ۔۔ پی ٹی آئی میں شمولیت کا اعلان ۔۔ جشن کا سماں

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)مسلم لیگ ن کی مشکلات ہیں کہ کم ہونے کا نام نہیں لی رہیں ،نواز شریف کی نااہلی کے بعد پارٹی شدید مسائل کا شکار ہے ۔ان پی ٹی آئی نے مسلم لیگ ( ن ) کی دو وکٹیں حاصل کر لی ہیں۔

پاکستان مسلم لیگ ( ن ) کی رکن قومی اسمبلی غلام بی بی بھروانہ اور سابق رکن قومی اسمبلی صائمہ اختر بھروانہ کا تحریک انصاف میں شامل کئے جانے کا فیصلہ۔ جھنگ کے بھروانہ خاندان اور تحریک انصاف کے مابین معاملات طے پا گئے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان مسلم لیگ ( ن ) کی رکن قومی اسمبلی غلام بی بی بھروانہ نے تحریک انصاف میں شامل ہونے کا امکان ہے باضابطہ شمولیت کا اعلان نئے انتخابات سے قبل ہو گا اس کے علاوہ سابق رکن قومی اسمبلی اور شور کوٹ کے حلقہ انتخاب میں مسلم لیگ ( ن ) کی امیدوار صائمہ اختر بھروانہ کا بھی تحریک انصاف میں شامل ہونے کا فیصلہ

صائمہ اختر بھروانہ مشرف دور میں مسلم لیگ (ق) کی ٹکٹ پر رکن اسمبلی منتخب ہوئی تھی اور ان کے ایک ایک وکٹ کی بدولت ظفر اللہ جمالی وزیر اعظم بنے تھے دونوں خواتین پر کوئی کرپشن کا الزام نہیں ہے اور جھنگ میں ان کو عوام کی بھاری اکثریت کی حمایت حاصل ہے غلام بی بی بھروانہ گزشتہ تین انتخابات جیت کر ریکارڈ قائم کرچکی ہیں

غلام بی بی بھروانہ کا نانا حیدر بھروانہ بھی ممبر قومی اسمبلی منتخب ہوئے تھے اور سیدہ عابدہ حسین کے والد اور سابق وفاقی وزیر تعلیم سید عابد حسین کو شکست فاش سے بھی دوچار کیا تھا

صائمہ اختر بھروانہ بھی سیاسی خاندان سے تعلق ہے ان کے والد مراد اختر بھروانہ نواز شریف کی پنجاب کابینہ میں وزیر صنعت رہ چکے ہیں اور ضلعجھنگ کے چیئرمین بھی رہے ہیں ‎

سعودی عرب نے سابق وزیرواعظم نواز شریف کو بڑا جھٹکا دیدیا ۔۔ اگلے انتخابات میں مسلم لیگ (ن) کا کیا حال ہونے والا ہے ؟ انکشاف نے ہلچل مچا دی

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) سینئر تجزیہ کار ہارون الرشید نے کہا کہ ہمارے پاس یہ معلومات نہیں کہ نوازشریف نے سعودی عرب جاکرمعافی مانگی،معذرت کی یا درخواست کی ،سعودی حکومت ہمیشہ کیلئے انہیں بھول چکی ہے ، انہوں نے ان پرجتنے احسانات ہوسکتے تھے کردیئے ۔

دنیا نیوزکے پروگرام ’’تھنک ٹینک‘‘ میں میزبان عائشہ نازسے گفتگوکرتے ہوئے انہوں نے مزید کہا کہ یمن کے معاملے پرپاکستانی قوم کارجحان یہ تھاکہ ہمیں اس معاملے میں فریق نہیں بنناچاہئے ، قومی اسمبلی میں غیرجانبدارانہ تقریریں ہوئیں ان کی تحقیرہوئی وہ جانتے بوجھتے ہوئے انہوں نے کیا ،احسان توکسی کاوہ یادرکھتے نہیں ہیں ۔

ایک سوال پرہارون الرشید نے کہااین اے 120میں تومقابلہ ہواتھا،این اے 4 میں کون سا مقابلہ ہواہے ؟، عمران خان کومعافی مانگناپڑی، میں اسے کہتارہااداروں سے لڑناغلط فیصلہ ہے ۔ یہ جوعلما ایم ایم اے بحال کرنے جارہے ہیں اس کا کوئی مستقبل نہیں ہے۔

پروگرام میں شریک سینئرتجزیہ کار پروفیسرڈاکٹرحسن عسکری نے کہا کہ یہ بات تودرست ہے کہ ضمنی الیکشن کے نتائج کی بنیاد پرآپ عام انتخابات کے نتائج کی پیش گوئی نہیں کرسکتے ۔پی ٹی آئی نے الیکشن جیتایہ ان کیلئے اچھی خبرہے ۔آپ یہ فرض کیجئے یہ الیکشن ہارجاتے تو ن لیگ کی طرف سے ڈھنڈوراپیٹاجاتاکہ پی ٹی آئی زیروہوگئی ۔

الیکشن میں اصل مقابلہ ن لیگ اورپی ٹی آئی کے درمیان ہوگا۔معروف کالم نگاراورتجزیہ کار ایاز امیر نے مذہبی جماعتوں کے سیاسی مستقبل کے حوالے سے سوال پرکہاکہ مذہبی جماعتیں اپناعوام سے تعلق کھوبیٹھی ہیں ۔این اے 4کاالیکشن بالکل واضح تھا لیکن آفرین ہے لاہورمیں بیٹھے کچھ پنڈتوں پرجوکہتے رہے کہ اپ سیٹ ہوسکتاہے ۔

احتسابی عمل کے بارے میں سوال پرایازامیرنے کہا یہ نہیں سمجھ رہے تھے احتساب عدالت میں ان کی اس طریقے سے پیشی ہوگی ۔ایازامیرنے سوال اٹھایاکہ جاتی عمرہ کے گرد پولیس کی بٹالین کس ضابطے کے تحت تعینات ہے ؟

۔روزنامہ دنیا کے گروپ ایگزیکٹوایڈیٹر سلمان غنی نے این اے 4 میں ضمنی الیکشن نتائج کے خیبرپختونخوا کے سیاسی مستقبل پراثرات کے حوالے سے سوال پرکہا کہ حقائق کو جھٹلایا نہیں جاسکتا،یہ اچھی بات ہے کہ جوتحریک انصاف کی سیٹ تھی انہوں نے دوبارہ وہ سیٹ جیت لی ہے ۔

یہ ٹرینڈ مستقبل کے ہونے والے انتخابات کی سمت متعین کررہاہے ، ن لیگ کو جے یو آئی کے ووٹ نہیں ملے ۔جماعت اسلامی کے کم ووٹ بھی ان کیلئے لمحہ فکریہ ہے ۔مذہبی جماعتوں کامستقبل اچھانہیں ہے ۔سلمان غنی نے وی آئی پی احتساب کے متعلق سوال پرکہا کہ جس جس نے قومی خزانہ لوٹا اور اختیارات سے تجاوز کیا ہے سب کا احتساب ہونا چاہئے۔

جو کام کوئی نہ کر سکا وہ عمران خان نے کر دکھایا ۔۔ نیب حرکت میں آ گئی ۔۔ پاکستان بھر میں بڑے بڑے افسران بوکھلا گئے۔۔ وعدہ معاف گواہ بننے کو تیار

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک)اربوں روپے کی کرپشن اور لاکھوں روپے تنخواہ وصول کرنے والی کمپنیوں کے بے نقاب ہونے والے افسران نے کارروائی سے بچنے کے لئے ہاتھ پاؤں مارنے کے علاوہ کئی افراد سے رابطے شروع کر دئیے ہیں ۔

افسران نے کہنا شروع کر دیا ہے کہ جو ہم کئی لاکھوں روپے میں تنخواہ لے رہے تھے اس سے زیادہ کئی گناکرپشن افسران اس کمپنیوں میں کر رہے تھے ،افسران نے انکوائری اور نیب سے بچنے کے لئے محفوظ راستے ڈھونڈنے کے لئے ہاتھ پاؤں مارنا شروع کر دئیے ہیں ۔کئی چھوٹے افسران تو وعدہ معاف گواہ بھی بننے کے لئے تیار ہیں ۔

کمپنیوں کے حوالے سے کئی اہم انکشافات میں یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ ان کمپنیوں کو آڈٹ کرنے کے لئے بنایا گیا تھا ۔ کیونکہ قانون کے مطابق اے جی آفس کے ذریعے بنا ئی گئیں کمپنیاں نہ صرف آڈٹ کی پابند ہوتی ہیں بلکہ ان کے بجٹ اور اور دیگر معاملات کے حوالے سے شفافیت لازمی ہوتی ہے ۔

ان کمپنیوں کو بنانے کا مقصد بھاری تنخو اہوں سے سرکاری افسران کو نوازنا تھا اور خود کرپشن کرنا تھی ۔کمپنیوں کے اندر من پسند لوگوں کو اربوں کے ٹھیکے دیئے گئے سب کچھ منظر پر آنے کے بعدملتان میٹرو کرپشن کی طرح اس کی انکوائری بھی ایسے لوگوں کے حوالے کی گئی جو کرپشن کی بہتی گنگا میں ہاتھ دھو چکے ہیں ۔

مختلف کمپنیوں میں تعینات گریڈ 17سے21تک افسران کے اپنی جان بچانے کے لئے تمام کرپشن بے نعقاب کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے اور کئی افراد نے تو اہم ترین اداروں اور ذمہ داران سے رابطے بھی کر لئے ہیں ۔

اگر موقع ملا تو شاہ محمود پر بھی ہاتھ اٹھانے سے گریز نہیں کروں گا

مرید حسین قریشی کا کہنا ہے کہ اگر موقع ملا تو شاہ محمود پر بھی ہاتھ اٹھانے سے گریز نہیں کروں گا۔ تفصیلات کے مطابق تحریک انصاف کے رہنما شاہ محمود قریشی کے بھائی مرید حسین قریشی کی جانب سے گزشتہ روز اپنے مرید پر کیے جانے والے تشدد کے معاملے پر وضاحت دی گئی ہے۔

مرید حسین قریشی کا کہنا ہے کہ مرید کو تشدد کا نشانہ بنانے پر بالکل کوئی پچھتاوا نہیں۔مریدنے ان کیساتھ گستاخی کی تھی اس لیے اسے تشدد کا نشانہ بنایا۔ مرید حسین کا مزید کہنا ہے کہ وہ چاہے اپنے مریدوں کیساتھ کریں انہیں کوئی نہیں روک سکتا۔ انہیں یہ حق 800 سال قبل دیا گیا تھا۔

مرید حسین قریشی نے اپنی بھائی شاہ محمود قریشی پر بھی دوبارہ شدید تنقید کی ہے۔ مریم حسین کا کہنا ہے کہ شاہ محمود قریشی نے ہمارے والد کی وصیت پر عمل نہیں کیا۔ انہیں منع کیا گیا تھا کہ وہ سندھ سے الیکشن نہیں لڑیں گے تاہم انہوں نے اس وصیت پر عمل نہیں کیا۔ اگر موقع ملا تو شاہ محمود پر بھی ہاتھ اٹھانے سے گریز نہیں کروں گا۔

حضرت بہاؤالدین زکریا ملتانی کے عرس کے موقع پر شاہ محمود قریشی تاخیر سے درگاہ میں پہنچے تاہم اس سے پہلے مرید حسین قریشی نے درگاہ کو غسل دینے کے لیئے زائر سے عرق گلاب مانگا جس پر زائر نے انکار کر دیا تو شاہ مرید قریشی طیش میں آ گئے اور درگاہ سے واپسی پر زائر کو پکڑ لیا اور تھپڑوں کی بارش کر دی،

زائر نے معافی مانگنے کے لئے پاؤں بھی پکڑے لیکن پھر بھی مرید قریشی کا غصہ کم نہ ہوا اور تھپڑوں کا سلسلہ بھی جاری رکھا، کچھ دیر بعد دیگر زائرین نے بیچ بچاؤ کرایا۔ اسکے بعد مرید حسین قریشی درگاہ سے عرس کی تقریب میں چلے گئے، جہاں شاہ محمود قریشی سے تلخ کلامی کے بعد مرید قریشی نے خود مائیک سنبھال لیا اور شاہ محمود قریشی کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے چور ڈکیٹ اور قاتل بھی کہہ ڈالا۔

مچھ کے قریب نواب اکبر بگٹی ایکسپریس کے قریب بم دھماکہ ، 6افراد زخمی

بلوچستان کے ضلع بولان کے علاقے مچھ کے قریب نواب اکبر بگٹی ایکسپریس پر ہونے والے بم دھماکے میں 6افراد زخمی ہوگئے ہیں جنہیں علاج کیلئے سول ہسپتال مچھ منتقل کردیاگیاہے ۔

گزشتہ روز مچھ کے علاقے میں نواب اکبربگٹی ایکسپر یس پر بم دھماکہ ہوا جس کے نتیجے میں 6افراد شاہدراؤ ،انوک بہادر ،محسن رضا،شہزاد ،عبدالغفار اور محمد عرفان زخمی ہوگئے جنہیں فوری طور پر سول ہسپتال مچھ منتقل کردیاگیاہے جہاں انہیں طبی امداد دی جارہی ہے اس سلسلے میں مزید کارروائی جاری ہے ۔

دوسری جانب صوبائی وزیر داخلہ میر سرفرازبگٹی اور صوبائی وزیر تعلیم عبدالرحیم زیارتوال نے جائے وقوعہ کا دورہ کیا اور مسافروں کے ساتھ ملاقات کی اور انہیں یقین دلایاکہ حکومت اور سیکورٹی ادارے عوام کی جان ومال کے تحفظ سے غافل نہیں ہے ۔اس موقع پر ڈپٹی کمشنر ہرنائی اور ایف سی حکام بھی ان کے ہمراہ تھے ۔

عمران خان نے مجھے کہا کہ تم اپنا حمل گرا دو ،جب ہم جب شادی کریں گے تب یہ بچی ہمارے معاشرے میں قابل قبول ہوگی ۔۔ٹیلی وژن کی انتہائی معروف خاتون شخصیت نے عمران خان کا اصلی چہرہ بے نقاب کر دیا ۔۔ لرزہ خیز تفصیلات لنک میں

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک)ایم ٹی وی کی معروف پریزنٹر کرسٹینا بیکر نے پاکستان تحریک انصاف کے قائد عمران خان پر جنسی ہراساں کرنے کے الزامات لگاتے ہوئے کہا کہ میں عمران خان کی جانب سے شادی کے کئے جانے والے وعدے پر1994میں اپنا حمل گرا دیا ،مگر بعدازاں جمائمہ سے رشتہ جوڑ لیاگیا۔

کرسٹینا کا کہنا ہے کہ وہ عمران خان سے 1992سے رابطے میں تھی جو 1995میں اپنے منتقی انجام کو پہنچا ،1994میں حاملہ ہوئی,عمران خان کے ہمراہ لندن اور پاکستان میں وقت گزارا جس کا ذکر کرسٹینا نے اپنے کتاب ”ایم ٹی وی ٹو مکہ“ میں بھی کیا ہے۔

کرسٹینا نے ہالی وڈ کے ایک مقبول ترین پروگرام میں تفصیلات سے پردہ فاش کرتے ہوئے کہا کہ اسے عمران خان کی جانب سے جنسی ہراساں کئے جانے کے علاوہ ایک بار مارا پیٹا بھی گیا۔کرسٹینا کا کہنا ہے کہ وہ پاکستانی مسلمانوں سے متاثر ہوکر دائرہ اسلام میں داخل ہوئی،جب میں اپنے بوائے فرینڈ عمران خان کے ساتھ پاکستان کے دورے پر تھی۔

پاکستان سے واپسی پر مجھے حمل ٹھہرنے کا احساس ہوا جس کی تصدیق ڈاکٹر نے بھی کر دی کہ وہ ایک بچی کی ماں بننے والی ہے۔عمران خان کو ا ±سکی ہونے والی بیٹی کے بارے مطلع کیا گیا تو اس نے حمل گرانے کا یہ کہتے ہوئے اصرار کیا کہ وہ مجھ سے اسلامی تہذیب کے عین مطابق ازدواجی رشتہ میں منسلک ہوگا،جو قانونی اور مذہبی طور پر قابل قبول ہوگا۔

تو میں چلسی ہسپتال میں اپنا حمل گرا دیا اور یہ سب ہسپتال کے ریکارڈ میں موجود ہے۔کرسٹینا کا کہنا ہے کہ اس نے لند ن اور پاکستان کے دورے پر عمران خان کے شوکت خانم کینسر ہسپتال کیلئے فنڈ ریزنگ بھی کی۔

مگر جب ہم کلب گئے تو عمران خان نے یہ دس ہزار پونڈ جوئے میں ہارا دیا۔کرسٹینا نے مزید کہا کہ عمران خان حیلے بہانے بنا کے ٹالٹا رہا اور نائٹ کلب میں جمائمہ گولڈ سمتھ سے ملاقات ہونے پر اپنا ذہن بدل لیا۔تب میں تعلیمات دین اسلام میں اچھی طرح محو چکی تھی اور عمران خان سے شادی کی خواہاں تھی۔

مگر میری تو دنیا کو جھٹکا ہی لگ گیا یہ جان کر کہ عمران خان جمائمہ سے شادی کرنے جا رہا ہے۔میں ایک ماہ روتی رہی، میں نے عمران خان کو ا س کے کئے ہوئے وعدے یاد کرائے، مگر اس نے مجھے اپنی زندگی سے باہر ایک ٹشو پیپر کی طرح پھینک دیا۔

کرسٹینا کے مطابق جمائمہ کے طلاق کے بعد عمران خان نے پھر مجھ سے رجوع کیا اور اپنے کئے پر شرمندگی کا اظہار بھی کیا اور معذرت بھی کی۔بول چال کے ایک بار پھر اچھے تعلقات استوار ہوگئے۔ عمران خان کی دعوت پر کرسٹینا نے 2014میں بنی گالا کا وزٹ کیاجہاں عمران خان کی جانب سے ایک عشائیہ کا اہتمام کیا گیا تھا۔

اعوان چوہدری اور نعیم الحق کے ذمے اِن کی رہائش کا بندوبست کرنا تھا۔اعوان چوہدری پر الزام عائد کرتے ہوئے کرسٹینا نے انکشاف کیا کہ اعوان چوہدری نے بے ہودہ الفاظ بھی استعمال کئے اور رات ایک ساتھ گزارنے کا بھی کہا۔کرسٹینا نے انکار بھی اور عمران خان کو اسے حوالے سے آگاہ بھی کیا کہ اعوان چوہدری نے تیزاب گردی کی دھمکی بھی دی ہے۔

یہ میرے لئے ناقابل قبول تھا جب عمران خان نے خوشگوار وقت گزارنے اور اِس بات کو نظرانداز کرنے کا کہا۔اور اس واقعے کو فقط ایک مذاق قرار دیا۔اس وقت کرسٹینا نے عہد کر لیاکہ ایسے گھناونے چہروں کو دنیا کے سامنے ضرور بے نقاب کرے گی

جنہوں نے عورتوں کو اپنی حوس کا نشانہ بنایا۔ریحام خان نے اپنے دوستوں کو بتایا ہے کہ اس نے عمران خان کے بلیک بیری میں کرسٹینا بیکر کے پیغامات خود دیکھے ہیں ،جب عمران خان کی ذوجہ کی حیثیت سے بنی گالا میں رہتی تھیں۔

قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے انفامیشن ٹیکنالوجی نے ’ایس سی او ‘ کو کمرشل بنیادوں پر کام کرنے کی اجازت دینے کی تجویز منظور کر لی

قومی اسمبلی کی کی قائمہ کمیٹی انفارمیشن ٹیکنالوجی نے فوج کے زیر انتظام چلنے والے خصوصی مواصلاتی ادارے ’ایس سی او ‘ کو ملک بھر میں کمرشل بنیادوں پر کام کرنے اور پرائیوٹ ٹیلی کام آپریٹرز کے ساتھ مقابلہ کرنے کی پیشکش کو منظور کر لیاہے ۔

ایس سی او کی سربراہی پاک فوج کے افسر کر رہے ہیں اور ایس او سی ایک عوامی شعبے کی تنظیم ہے جو کہ آئی ٹی وزارت کے ماتحت کام کر رہی ہے۔اس کا قیام 1976میں آزاد جموں کشمیر اور گلگت بلتستان ٹیلی کام کی خدمات کو فراہم کرنے اور اسے برقرار رکھنے کیلئے عمل میں لایا گیاتھا۔

نجی اخبار ’ڈان نیوز‘ کے مطابق قائمہ کمیٹی کے چیئرمین ایم کیوایم کے رکن قومی اسمبلی سید علی رضا عابدی نے وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی کو خصوصی مواصلاتی ادارے کو سہولیات فراہم کرنے کی ہدایت کر دی ہے۔ایس سی او کے ریگولیٹری افیئرز کے ڈائریکٹر ریٹائرڈ کرنل غلام حسین انجم نے مطالبہ کیا تھا کہ اس ادارے کو کمرشل بنیادوں پر کام کرنے کی اجازت دی جائے ۔

انفارمیشن ٹیکنالوجی کی حکومتی اور سینیٹ کی کمیٹی اسے کمرشل بنیادوں پر کام کرنے اورموبی لنک اور زونگ جیسی پرائیویٹ ٹیلی کام سیکٹر کے ساتھ مقابلے کرنے کی اجازت دینے کی مخالفت کر چکی ہے ۔

واضح رہے کہ ایس سی او کی سربراہی پاک فوج کے افسر کر رہے ہیں اور ایس او سی ایک عوامی شعبے کی تنظیم ہے جو کہ آئی ٹی وزارت کے ماتحت کام کر رہی ہے۔اس کا قیام 1976میں آزاد جموں کشمیر اور گلگت بلتستان ٹیلی کام کی خدمات کو فراہم کرنے اور اسے برقرار رکھنے کیلئے عمل میں لایا گیاتھا۔

گزشتہ دو برسوں سے ایس سی او کی جانب سے یہ مطالبہ کیا جارہا تھا کہ اسے خود مختار بنایا جائے اور تجارتی بنیادوں پر کام کرنے کی اجازت دی جائے تاکہ وہ ملک بھر میں اپنی خدمات فراہم کر کے آمدن پیدا کر سکے ۔

پاکستان تحریک انصاف کے رکن اسمبلی امجد خان نے ایس سی او کو کمرشل بنیادوں پر کام کرنے کی اجازت دینے کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ ’ایس سی او ‘ نے گلگت بلتستان اور آزاد جمو ں کشمیر کے انتہائی دشوار علاقوں میں ٹیلی کام کا بنیادی ڈھانچہ تعمیر کرنے سمیت بہت خدمات فراہم کیں ہیں اور اسے آمدن بنانے کا بھی حق حاصل ہے ۔

ماضی میں ایس سی او کی جانب سے ملک بھر میں زونگ ،ٹیلی نار ،موبی لنک جیسی تمام کمپنیوں کے ساتھ مقابلہ کرنے اور کام کرنے کیلئے مفت لائسنس جاری کرنے کی تجویز پیش کی گئی تھی ،جبکہ ان کی جانب سے کمپنی کی آمد پر ٹیکس میں چھوٹ کا مطالبہ بھی کیا گیا تھا ۔

وزارت انفار میشن ٹیکنالوجی کے سیکریٹر رضوان بشیر نے کمیٹی کو بتایا کہ ایس سی او کو کمرشل بنیادوں پر کام کرنے کی اجازت دینے کی تجویز حکومت کی ڈی ریگولیشن پالیسی کے متصادم ہے ۔حکومت کی ڈی ریگولیشن پالیسی کا مقصد یہ ہے کہ پرائیوٹ سیکٹر کو فروغ ملے ،

حکومت ایسا محسوس کرتی ہے کہ اگر ایس سی او کو مکمل خودمختاری دے دی گئی اور اس سے سرمایہ کاروں کے اعتماد کو ٹھیس پہنچنے کا خطرہ ہے ۔اس فیصلے کے باعث معیشت کی ترقی پر اثر پڑ سکتاہے اور خصوصی طور پر ٹیلی کمیونیکیشن سیکٹر میں ،جو کہ اس کے خلاف ہے ۔

جوائنٹ سیکریٹر خالد رضا گردیزی کا کہناتھا کہ ایس سی او کی تمام مالی ضروریات کو حکومت کی جانب سے پورا کیا جارہاہے تاکہ یہ ہموار طریقے سے اپنا کام جاری رکھ سکے ۔سیکریٹری رضوان بشیر کا کہناتھا کہ حکومت اس معاملے پر ایس سی او ،سینیٹ کی کمیٹی برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ممبران کے ساتھ اس کا حل تلاش کرنے کیلئے بات چیت کر رہی ہے ۔چیئرمین عابدی نے کہا کہ ہمیں امید ہے کہ اس معاملے کو جلد ہی ادارے کی بہتری کیلئے نمٹا دیا جائے گا ۔

تیسری عالمی جنگ کا خطرہ سروں پر آن پہنچا ۔ ۔ امریکی فوج کے سربراہ نے ہنگامی حکم جاری کر دیا ۔۔ کیا ہونے والا ہے ؟

واشنگٹن (مانیٹرنگ ڈیسک) امریکا پر جنگ کا خوف طاری ہو گیا،امریکا کی مسلح فوج کے سربراہ جیمز میٹس نے شمالی کوریا کو خبردار کیا ہے کہ پیانگ یانگ جوہری ہتھیاروں کے ذریعے ہمیں تباہ کرنے کی دھمکیاں دینا بند کرے۔

غیر ملکی خبر ایجنسی کے مطابق امریکی جنرل جیمز میٹس نے جنوبی کوریا کے وزیر دفاع سانگ یانگ مو کے ہمراہ شمالی کوریا کی سرحد سے کچھ فاصلے پر واقع غیر مسلح زون کا دورہ کیا۔اس موقع پر جنرل جیمز میٹس نے شمالی کوریا کے سربراہ کم جانگ ان کی حکومت کو جارحانہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ پنانگ یانگ اپنے لوگوں کے ساتھ برا برتاو کرتا ہے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ شمالی کوریا کے ہمسائے میں جنوبی کوریا واقع ہے جس نے اپنے لوگوں کے لیے جمہوریت کو ترجیح دی ہے۔یاد رہے کہ جزیرہ نما کوریا میں 1950 سے 1953 تک ہونے والی جنگ کے بعد سے جنوبی کوریا میں تقریبا 30 ہزار امریکی فوجی تعینات ہیں۔

سانگ یانگ مو کا کہنا تھا کہ شمالی کوریا کو مسئلے کے حل کے لئے ہر صورت مذاکرات کرنا ہوں گے۔یاد رہے کہ کچھ ماہ قبل امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے شمالی کوریا کو خبردار کیا گیا تھا کہ اگر پیانگ یانگ نے امریکا یا اس کے اتحادیوں کو دھمکایا تو شمالی کوریا کو مکمل طور پر تباہ کردیں گے۔

دوسری جانب شمالی کوریا کے رہنما نے بھی امریکی صدر کے بیان پر ردعمل دیتے ہوئے کہا تھا کہ ہم ایک ایٹمی قوت ہیں اور پورا امریکا ہمارے نشانے پر ہے، جب چاہیں امریکا کو تباہ کر سکتے ہیں۔

سعید انور 90 کی دہائی کا کرکٹ کی دنیا کا بلامبالغہ سب سے خطرناک کھلاڑی تھے

سعید انور 90 کی دہائی کا کرکٹ کی دنیا کا بلامبالغہ سب سے خطرناک اوپننگ بیٹسمین ہوا کرتا تھا۔ دنیا کی تمام ٹیموں کے خلاف، تمام گراؤنڈز میں اس نے ہر باؤلر کی کھل کر دھلائی کی۔ 90 کی دہائی میں ہی وسیم اکرم کے کپتانی سنبھالتے ہی ہماری ٹیم کو میچ فکسنگ کی لت بھی لگ گئی۔

ٹیم میں ہر وقت 4 سے 6 ایسے کھلاڑی لازمی شامل رھے جو ہر وقت بکیوں کےساتھ رابطے میں رہتے تھے۔1999 کے ورلڈ کپ میں وسیم اکرم کی کپتانی میں پاکستانی ٹیم ہارٹ فیورٹ تھی جو لیگ میچوں میں سب کو ہراتی ہوئی فائنل میں پہنچ گئی جہاں اس کا مقابلہ آسٹریلیا سے تھا۔اس میچ پر ساری دنیا میں جوا کھیلا گیا اور پاکستان کو تمام بکیوں نے فیورٹ قرار دیا۔

فائنل کی کمنٹری کیلئے انڈین پلئیر راحل ڈریوڈ کو خصوصی طور پر بلایا گیا جس نے میچ شروع ہونے سے قبل پاکستان کو فیورٹ قرار دیا۔ تمام ماحول بن چکا تھا۔ پاکستانی ٹیم جب بیٹنگ کرنے آئی تو اوپنر سعید انور اپنے روائتی انداز میں کھیل رہا تھا۔ پھر چند اوورز کے بعد اچانک اس نے اپنے بیٹ کی گرپ کو اوپر نیچے کرنا شروع کردیا۔

ایک دو گیندیں کھیلنے کے بعد اس نے پویلین کی طرف اشارہ کیا اور پھر بارھواں کھلاڑی ایک نیا بیٹ لے کر اس کے پاس آگیا، چند سیکنڈ کھسر پھسر ہوئی اور دنیا نے یہی سمجھا کہ پویلین سے کچھ انسٹرکشنز ملی ہیں۔ اگلی گیند پر سعید انور ایک غیرضروری شارٹ کھیلتے ہوئے آؤٹ ہوگیا۔

پھر ہماری ٹیم کی لائین لگ گئی اور ہم یہ فائنل یکطرفہ مقابلے کے بعد ہار گئے۔کہا جاتا ھے کہ اس میچ سے سعیدانور سمیت ٹیم کے اہم کھلاڑیوں نے کروڑوں روپے بنائے۔پھر کچھ یوں ہوا کہ تھوڑے عرصے بعد سعید انور کی چھ سالہ بیٹی کو ایک موذی مرض نے گھیر لیا اور وہ معصوم بچی چند ہفتوں کے اندر اندر اللہ کو پیاری ہوگئی۔

سعید انور کو اپنی اس بچی کی ناگہانی موت نے اندر سے توڑ پھوڑ دیا۔ وہ انتہائی خطرناک حد تک ڈپریشن کا شکار ہوگیا اور اس نے ایک آدھ مرتبہ خودکشی کی کوشش بھی کی۔ پھر اس کا ایک دوست اسے ایک دن شب جمعہ تبلیغی مرکز پر لے گیا۔ سعید انور نے رات وہیں گزاری اور بہت دنوں بعد اسے سکون قلب حاصل ہوا۔ اس رات سعید انور کی کایا پلٹ گئی اور اس نے اللہ سے اپنے گناہوں کی معافی مانگی اور مکمل طور پر تبلیغ کیلئے وقف ہوگیا۔

سعید انور نے اپنے قریبی دوستوں بشمول ثقلین مشتاق، مشتاق احمد، انضمام اور وقار یونس کو بھی دین کی طرف راغب کرلیا اور یوں ہماری ٹیم میں چھوٹی چھوٹی داڑھیاں رکھے، نماز پڑھنے والے کھلاڑیوں کی تعداد بڑھ گئی۔انہیں دنوں جنید جمشید بھی ہر طرح سے نقصان میں جارہا تھا اور اس کا دل بھی میوزک سے اچاٹ ہونے لگا۔ وہ ایک مشترکہ دوست کے زریعے سعید انور سے ملا اور پھر جنید جمشید کی کایا بھی پلٹ گئی۔

اس سال حج کے موقع پر جنید جمشید اور سعید انور مکہ میں ایک ہی کیمپ میں تھے، جب سعید انور جنید جمشید کے پاس آیا اور اسے کہا کہ دسمبر میں وہ تبلیغی جماعت کی نصرت کیلئے چترال جارہا ھے اور وہ جنید جمشید کو اپنے ساتھ لے کر جائے گا۔ جنید جمشید ایک انتہائی نفیس شخص تھا جو کبھی نہ نہیں کرتا تھا۔ اس نے حامی بھر لی۔

کل جس سفر سے واپسی پر جنید جمشید کی شہادت ہوئی، یہ وہی سفر تھا جس کا پلان حج کے دوران بنا، یعنی اللہ نے مکہ میں ہی اسے اپنے پاس بلانے کا عندیہ دے دیا تھا۔6 سالہ معصوم بچی کی اچانک وفات نے کتنے لوگوں کی زندگیاں بدل کر رکھ دیں۔ زندگی میں ہونے والے نقصانات اور سانحات اپنے پیچھے کوئی نہ کوئی عظیم انعام بھی لے کر آتے ہیں جو صرف شعور کی قوت رکھنے والوں کو ہی نظر آسکتا ھے۔

یہ پیغام سعید انور کو نظر آگیا، یہی پیغام جنید جمشید کو بھی مل گیا اور آج وہ نبی پاک ﷺ کے پاس بیٹھا ان کا دیدار کررہا ہوگا، اور سب کی موجودگی میں اللہ کی حمد اور نبیﷺ کی شان میں نعت پڑھ رہا ہوگا۔یہ سعادتیں قسمت والوں کو ملتی ہیں۔ کسی کو اولاد کا غم ملا تو وہ اللہ کا برگزیدہ بندہ بن گیا۔ کسی کو سب نعمتیں ملیں لیکن وہ پھر بھی اپنی اولاد کو حرام کھلا کر پالتا رہا اور ذلیل و خوار ہوتا رہا۔

عزت اور ذلت، کامیابی اور ناکامی، عظمت اور پستی، یہ سب اللہ نے آپ کی دسترس میں رکھی ہیں، آپ جسے چاہیں، آگے بڑھ کر اٹھا لیں۔ اب یہ آپ پر منحصر ھے کہ آپ اپنے لئے عزت، کامیابی اور عظمت کا انتخاب کرتے ہیں یا ناکامی، رسوائی اور ذلت کا۔یہ فیصلہ آپ کا اپنا ھے، بدلے میں جو کچھ بھی ملے گا، وہ آپ کے اپنے فیصلے کی بدولت ہی ہوگا!!!

پنجاب پولیس کا انتہائی شرمناک کارنامہ سامنے آ گیا، بھرے میدان میں لڑکی کے کپڑے اتروا دئیے اور پھر۔۔۔ ویڈیو نے سوشل میڈیا پر ہنگامہ برپا کر دیا

پنجاب پولیس کے کئی کارنامے خبروں کی زینت بنتے رہتے ہیں اور سوشل میڈیا پر بھی بہت سے ایسے معاملات سامنے آتے ہیں جس میں کبھی پنجاب پولیس کی لاپرواہی عیاں ہو رہی ہوتی ہے تو کبھی محکمے میں چھپی کالی بھیڑوں کا اصل چہرہ نظر آتا ہے۔

سوشل میڈیا پر ایک ایسی ہی ویڈیو گردش کر رہی ہے جس نے صارفین کو ”ہلا“ کر رکھ دیا ہے۔ اس ویڈیو میں اخلاقیات کی تمام حدود کو پار کر دیا گیا اور پنجاب پولیس کے چند نامعلوم اہلکاروں نے عورت کو بھرے میدان میں کپڑے اترنے پر مجبور کر دیا جبکہ اس دوران کیمرے کے پیچھے وہاں موجود لوگوں کی چہ مگوئیاں بھی سنی جا سکتی ہیں۔

ویڈیو کے شروع ہوتے ہی ایک شخص کی آواز آتی ہے تو کیمرے میں نظر آنے والی خاتون اہلکار سے کہتا ہے کہ ”اتارنے دو اسے اپنے کپڑے۔“ اس پر خاتون اہلکار پیچھے ہو جاتی ہے اور کیمرے میں نظر آنے والی لڑکی اپنے کپڑے اتار کر شائد یہ باور کروانے کی کوشش کرتی ہے کہ اس کے اپنے پاس کوئی چیز نہیں چھپا رکھی۔تاحال یہ معلوم نہیں ہو سکا کہ یہ

ویڈیو کس علاقے میں بنائی گئی ہے اور وہاں پنجاب پولیس کے کون سے اہلکار موجود تھے جبکہ لڑکی بھرے میدان میں اپنے کپڑے اتارنے پر کیوں مجبور ہو جاتی ہے تاہم اس ویڈیو کے باعث سوشل میڈیا صارفین میں خوب غم و غصہ پایا جا رہا ہے جو ملوث اہلکاروں کیخلاف کارروائی کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

۔۔۔ویڈیو دیکھیں۔۔۔